عجیب بندہ

Posted on July 25, 2017



عجیب بندہ

عجیب بندہ هے جب اپنا پہلا میچ کھیل تا هے تو سب نے کہا کے یہ بندہ آگے بلکل نهی کھیل پایگا. پھر وہ ایسا کھیلا کے سبکو حیران کر دیا. اس نے کینسر هسپتال بنا نے کا ارادہ کیا کے جسمیں غریبوں کو علاج کی مفت سہولت فراہم کی جا ئینگی نہ صرف یہ بلکہ یہ ہسپتال تمام جدید سہولتوں سے آراستہ بھی ہو گا. سب نے پھر کہا کہ یہ نا ممکن هے. لیکن وہ سب حیران تهے کے نہ صرف یہ کے وہ هسپتال بهی بنا اور وعدوں کے مطابق غریبوں کا علاج بھی بغیر کسی تفریق کے یا تو مفت ہو تا ہے یا لوگ اپنی حیثیت کے مطابق ادائیگی کرتے ہیں۔ .
پھر جب اسنے بین الاقوامی طرز کی یونیورسٹی بنا نے کا ارادہ کیا تو ایک مرتبہ پھر لوگوں نے کہا کے یہ نہیں بن سکتی. اس بندے نے ایک مرتبہ پھر سبکو ورطہ حیرت میں ڈال دیا کہ جب کچھ عرصہ میں ہے بین الاقوامی معیار کی یونیورسٹی تدریس کے لیے تیار تھی

عجیب بندہ هے جہاں جہاں لوگ اسے منع کر تے رهے وہ فتح کے جھنڈے گاڑ تا ہوا، ساری رکاوٹوں کو شکست دے کر اپنے بڑے بڑے خوابوں کو حقیقت کا روپ دے کر آگے بڑھ تا رہا اور یہ طلسماتی بندہ سبکو حیران کر تا رہا۔

اور اب اسنے ایک بڑا اور مشکل فیصلہ کیا کے سیاست میں حصہ لیکر قوم کا شعور اجاگر کرنا ہے اور اس قوم کو ایک دیانتداری قیادت دینی ہے تاکہ یہ قوم دنیا کے کسی بھی ملک میں سر اٹھا کے چل سکے. یہاں پر بھی سب نے منع کیا کہ یہ سب سے مشکل سفر ہے، اس سفر میں گالیاں بھی ہیں اور منافقت بھی. لیکن یہ بندہ بڑا عجیب ہے. یہ چیلنج لیتا بھی اور پھر کپتان کی طرح انکا سامنا بھی کر تا ہے. مستقل مزاج ایسا کے صرف اپنی منزل ہے نظر. مشورے سب سے لیتا رہا لیکن توجہ منزل کا حصول رہی. نظریئے کے حصول کے سمجھوتے ضرور کئے لیکن منزل ہے کوئی سمجھوتہ نہیں کیا. کبھی طالبان خان، کبھی یو ٹرن خان کے طنزیہ تیروں کو برداشت کیا اور کبھی ذاتیات پر کئے گئے وار کو سہا. لیکن طنز کے یہ تیر اسکے اعتماد کو متزلزل نہ کر سکے. بلکہ وہ اور زیادہ پر عزم ہو کے میدان میں آیا. عجیب بندہ ہے کے ہر میدان مار تا چلا گیا. اسکے مخالفین کے پاس صرف ایک ایجنڈا ہیکہ بس اس بندے کو جتنا ہو سکتا ہے بدنام کرو. لیکن دوسری طرف اللہ تعالٰی اسکو عزت دیتا رہا. اور وہ طبقہ جو اپنی ساری توانائی صرف اسکو بد نام کر نے میں لگا تا رہا. اللہ تعالیٰ نے ان سب کو انکے اصل کے ساتھ دنیا میں لا کھڑا کیا. وہ بندہ جہاں جا تا ہے عوام کا ایک جم غفیر اسکے ساتھ ہو تا ہے. اسکے مخالفین جو کبھی راج کیا کر تے تھے آج عوام کے سامنے اپنی معصومیت کی بھیک مانگنے ہوے نظر آتے ہیں۔

آج وہ اپنی اس زندگی کے اس بہت اہم میچ کی کامیابی کے بہت قریب هے. وہ یہاں تک ایک بہت بڑی جدوجہد کے بعد پہنچا ہے. یہ جدوجہد تقریباً دو دہائیوں پر محیط ہے۔
بلا شبہ آج وہ جس مقام ہے کھڑا ہے باقی لوگ اسکے آگے بو نے نظر آتے ہیں. بلا مبالغہ وہ قائد اعظم کے بعد پاکستان کا سب سے مقبول ترین اور چاہ جانے والا شخص ہے. اسکی سب سے بڑی وجہ یہ ہے کہ اس نے آج تک جو بھی خدمت پر مبنی کام کئے سب میں پہلے نمبر پہ رہا. اسکے بہت سے بڑے کارناموں میں ایک کارنامہ یہ بھی ہیکہ اس نے قوم کا شعور اجاگر کیا. وہ حقیقتاً محسن پاکستان ہے
یہ عجیب، نڈر، بے خوف اور پر عزم بندہ عمران خان ہے. اسکے بارے میں اتنا کچھ لکھا جا چکا ہے اور آنے والے وقتوں میں اتنا کچھ لکھا جائے گا کہ شاید وہ پاکستان کے کسی اور سیاستدان کے حصے میں نہ آسکے. باقی سیاستدانوں کو تو شاید لوگ بہت جلد بهلا بہی دیں لیکن عمران خان ایک نہ بهلا دینے والی شخصیت کا نام . ھے

تحریر
محمد عارف انصا ری