سو لفظوں کی کہانیاں۔۔۔ چھیالیس سے پچاس

Posted on May 27, 2016



سو لفظوں کی کہانی نمبر 46۔۔۔۔ مقابلہ ۔۔۔۔۔۔
فیس بک پر اپنی تصویر لگائی جس میں ساتھ میں پوتی بھی تھی
شام تک فیس بک کے دوست لایئک کرتے رہے
تصویریں تو ہم نے اس سے پہلے بھی فیس بک پر لگائی ہیں
لیکن کبھی اتنے لایئک نہیں آئے
اپنے بچوں سے جن میں بیٹا اور بہو بھی شامل ہیں پوچھا
کیامیری یہ تصویر بہت اچھی ہے، سب مسکراکر خاموش ہوگئے
پھر بہن سے پوچھا، وہ بولی
یہ سارئے لایئک آپکے لیے نہیں آپکی پوتی کےلیے ہیں
اوہ تو یہ بات ہے، یہ جان کر بے حساب خوشی ہوئی
کیونکہ اولاد کی اولاد سے بڑھ کر کوئی نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سو لفظوں کی کہانی نمبر 47۔۔۔۔ وزیراعظم بدل لو ۔۔۔۔۔۔
آجکل پاناما لیک پوری دنیا کی سیاست پر چھایا ہوا ہے
نیوزی لینڈ اور پاکستان کی اسمبلیوں کے اسپیکرز
اپنے اپنےوزیراعظم سے پریشان تھے
نیوزی لینڈ کےاسپیکر کے مطابق پاناما پیپرز کے
حوالے سے وزیراعظم اسمبلی کی کارروائی میں خلل ڈال رہے تھے
ا سپیکر نے وزیراعظم کو اسمبلی سے باہر نکال دیا
پاکستان کےاسپیکر کے مطابق
جب سے پاناما لیک ہوا ہے
تب سے وزیراعظم نے اسمبلی کا رخ نہیں کیا
دونوں اسپیکرز نے مجھ سے مسئلے کا حل پوچھا
میں نے ایک کہانی پڑھی تھی ‘گھوڑئے بدل لو’
اس میں ترمیم کرکے کے کہہ دیا ‘وزیراعظم بدل لو’
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سو لفظوں کی کہانی نمبر 48۔۔۔۔ مقروض لکھ پتی ۔۔۔۔۔۔
بےباک گلوُ حلوائی سےقرض پر لائی ہوئی باسی مٹھائی بانٹ رہے تھے
ہمیں شوگر ہے مگر مٹھائی مفت میں تھی
اپنے رہنماوں کے نقش قدم پر چلتے ہوئے
بےباک کےسامنے ہاتھ پھیلا دیے
دو لڈو ہاتھ پر رکھے اور بولے لکھ پتی بننا مبارک ہو
بدبودار لڈو کھاتے ہوئے پوچھا ہم لکھ پتی کیسے ہوگے؟
بےباک بولے ابھی وزیر خزانہ نےقرض لینا نہیں چھوڑا
ستمبر 2013ء کے اعداد و شمار کے مطابق
ہر پاکستانی 96422 روپے کا مقروض ہوچکا تھا
تو لازمی ابتک لاکھ سے زیادہ کا مقروض تو ہوچکا ہوگا
ہوئے نہ آپ لکھ پتی
لیکن مقروض لکھ پتی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سو لفظوں کی کہانی نمبر 49۔۔۔۔ سامنے تو آوُ ۔۔۔۔۔۔
اپوزیشن والے کافی دن سے کچھ گنگنا رہے تھے
پوچھا کیوں گنگنا رہے ہو
بولے وزیر اعظم کو قومی اسمبلی میں بلارہے ہیں
پاناما لیکس کے بعد وزیر اعظم نے دو مرتبہ قوم سے خطاب کیا
حسب اختلاف کےشور مچانے پرسولہ مئی کو اسمبلی میں آئے
ایوان کو اپنی پچاس سال کی دکھ بھری داستان سنائی
اپوزیشن لیڈر نے واک آوٹ کیا
واپس آکراب ستر سوالوں کے جواب مانگ رہے ہیں
سات سوالوں کے جوابات کےلیے پیتالیس دن گنگنائے
اب ستر سوالوں کے جوابات کےلیے اپوزیشن لیڈر کو
دو ہزار اٹھارہ تک گنگنا ناپڑئے گا
زرا سامنے تو آؤ چھلیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سو لفظوں کی کہانی نمبر 50۔۔۔۔ دال قیمہ ۔۔۔۔۔۔
یہ تماری صدارت کی دوسری مدت کا آخری سال ہے
بچت کے نام پر ہمارئے پاس کچھ نہیں ہے
کاش تم امریکہ کی بجائےپاکستان میں پیدا ہوتے
نیویارک اور واشنگٹن میں اپنے کاروبار اور وی آئی پی فلیٹس ہوتے
کیا کروگے اوباما؟ مشیل نے پوچھا
اوباما بولے مشیل امریکی صدر کاروبار نہیں کرتا
تم ایسا ہی سمجھ لو میں پاکستان میں پیدا ہوا ہوں
لاکھوں پاکستانی دبئی میں ملازمت کرتے ہیں
مجھے بھی دبئی کے ایک شیخ نے نوکری کی آفر کی ہے
صدارت ختم ہونے کے بعد دبئی چلیں گے
کسی پاکستانی فیملی کے ساتھ ملکر دال قیمہ کھاینگے