افضل کی موجودگی میں غیر افضل کی حکمرانی

Posted on December 29, 2015



پچھلے کچھ عرصہ سے قرآن سے سوالات کے جوابات ڈھونڈنے کی کوشش میں لگا ہوا ہوں. اور الله کا خاص کرم بھی ہے کے بہت سے سوالات کے جوابات مل بھی گئے ہیں. کچھ عرصہ پچھلے قرآن میں سوره بقرہ پڑھتے ہوۓ ٢٤٦ آیت گزری. آیت ہے

أَلَمْ تَرَ إِلَى الْمَلإِ مِن بَنِي إِسْرَائِيلَ مِن بَعْدِ مُوسَى إِذْ قَالُواْ لِنَبِيٍّ لَّهُمُ ابْعَثْ لَنَا مَلِكًا نُّقَاتِلْ فِي سَبِيلِ اللّهِ…
ترجمہ: کیاتم نے بنی اسرائیل کی ایک جماعت کو موسیٰ کے بعد نہیں دیکھا جب انہوں نے اپنے نبی سے کہا کہ ہمارے لیے ایک بادشاہ مقرر کر دو تاکہ ہم الله کی راہ میں لڑیں…

اس آیت میں دو تین باتیں بڑی غور طلب ہیں. پہلی بات تو یہ کے بنی اسرائیل نے ایک نبی سے کہا کے ہمارے لئے ایک بادشاہ مقرر کر دو. تو پہلا سوال کے ایک نبی کے ہوتے ہوۓ بادشاہ کا کیا کام؟ دوسری بات یہ ہے کے یہ بادشاہ مقرر کرنے کی درخواست بنی اسرائیل نے دی نہ کہ الله نے حکم دیا. اور تیسری بات جو کہ سب سے اہم ہے کے نبی کو ایک امتی پر فضیلت کو سب ہی مانتے ہیں لیکن جب بنی اسرائیل نے ایک بادشاہ مانگا تو نبی بادشاہ نہیں بنا بلکہ ایک امتی بادشاہ بنا جس کا ذکر اگلی آیت ٢٤٧ میں آیا ہے

وَقَالَ لَهُمْ نَبِيُّهُمْ إِنَّ اللّهَ قَدْ بَعَثَ لَكُمْ طَالُوتَ مَلِكًا قَالُوَاْ أَنَّى يَكُونُ لَهُ الْمُلْكُ عَلَيْنَا وَنَحْنُ أَحَقُّ بِالْمُلْكِ مِنْهُ وَلَمْ يُؤْتَ سَعَةً مِّنَ الْمَالِ قَالَ إِنَّ اللّهَ اصْطَفَاهُ عَلَيْكُمْ وَزَادَهُ بَسْطَةً فِي الْعِلْمِ وَالْجِسْمِ وَاللّهُ يُؤْتِي مُلْكَهُ مَن يَشَاء وَاللّهُ وَاسِعٌ عَلِيمٌ
ترجمہ: ان کے نبی نے ان سے کہا بے شک الله نے طالوت کو تمہارا بادشاہ مقرر فرمایا ہے انہوں نے کہا اس کی حکومت ہم پر کیوں کر ہو سکتی ہے اس سے تو ہم ہی سلطنت کے زیادہ مستحق ہیں اور اسے مال میں بھی کشائش نہیں دی گئی پیغمبر نے کہا بے شک الله نے اسے تم پر پسند فرمایا ہے اور اسے علم اور جسم میں زیادہ فراخ دی ہے اور الله اپنا ملک جسے چاہے دیتا ہے اور الله کشائش والا جاننے والا ہے

تو الله تعالیٰ نے ان کی خواہش کو پورا کرتے ہوۓ طالوت کو بادشاہ بنا دیا.. اس آیت میں بنی اسرائیل کا اعتراض بھی آیا ہے اور اسکا جواب بھی. بنی اسرائیل نے اعتراض کیا کے اس کے پاس مال و دولت نہیں تو الله نے جواب دیا کے اس کے پاس علم ہے اور جسم میں فراخی ہے.

یہاں پر اگر صرف دینی علم کی ضرورت ہوتی تو الله کے نبی سے زیادہ کس کے پاس دینی علم ہوتا ہے؟ تو الله پھر اپنے نبی کو ہی حکمران بنا دیتا.. تو دینی علم کی ضرورت تو ہوتی ہے لیکن ساتھ میں دنیاوی علم کی اہمیت بھی ادھر ظاہر ہوتی ہے.

دوسری چیز یہ ہے کہ جسم کی فراخی سے یہ مطلب نہیں لیا جا سکتا کے وہ کوئی باڈی بلڈر تھے. بلکہ جسم کی فراخی سے مراد ایک چست و توانا جسم. اس سے ایک چیز جو اور واضح ہوتی ہے کے ایک توانا اور تندرست انسان ہی زیادہ علمی سمجھ بوجھ رکھنے کے قابل ہے.

تو ان دو آیتوں سے دو باتیں تو واضح ہو گئیں کے سمجھدار اور تندرست و توانا انسان کو ہی حکمران بنانا چاہیے. اس سے کچھ آیتوں بعد الله نے آیت ٢٥١ میں فرمایا

فَهَزَمُوهُم بِإِذْنِ اللّهِ وَقَتَلَ دَاوُدُ جَالُوتَ وَآتَاهُ اللّهُ الْمُلْكَ وَالْحِكْمَةَ وَعَلَّمَهُ مِمَّا يَشَاء وَلَوْلاَ دَفْعُ اللّهِ النَّاسَ بَعْضَهُمْ بِبَعْضٍ لَّفَسَدَتِ الأَرْضُ وَلَـكِنَّ اللّهَ ذُو فَضْلٍ عَلَى الْعَالَمِينَ
ترجمہ: پھر الله کے حکم سے مومنو ں نے جالوت کے لشکروں کو شکست دی اور داؤد نے جالوت کو مار ڈالا اور الله نے سلطنت اور حکمت داؤد کو دی اور جو چاہا اسے سکھایا اور اگر الله کابعض کو بعض کے ذریعے سے دفع کرا دینا نہ ہوتا تو زمین فساد سے پُر ہو جاتی لیکن الله جہان والوں پر بہت مہربان ہے

اس آیت میں الله نے بتایا کے طالوت کے بعد داؤد کو حکومت دی. اس آیت میں داؤد کی بہادری اور جسمانی طاقت کا بھی بتا دیا کے انھوں نے جالوت کو قتل کیا. ساتھ ہی یہ بھی فرمایا کے اور داؤد کو سکھایا یعنی بہت سا علم بھی دیا. تو حکمران کی جی دو شرائط آیت ٢٤٧ میں بتائی تھیں علم اور جسمانی صحت وہ حضرت داؤد میں بھی پوری طرح موجود تھیں.

سوره نمل میں کی آیت ١٦ میں
وَوَرِثَ سُلَيْمَانُ دَاوُودَ وَقَالَ يَا أَيُّهَا النَّاسُ عُلِّمْنَا مَنطِقَ الطَّيْرِ وَأُوتِينَا مِن كُلِّ شَيْءٍ إِنَّ هَذَا لَهُوَ الْفَضْلُ الْمُبِينُ
ترجمہ: اور سلیمان داؤد کا وارث ہوا اور کہا اے لوگو ہمیں پرندوں کی بولی سکھائی گئی ہے اورہمیں ہر قسم کے سازو سامان دیے گئے ہیں بے شک یہ صریح فضیلت ہے

اب یھاں پر ایک اہم نقطہ ملتا ہے. حضرت سلیمان حضرت داؤد کے بیٹے ہیں اور حضرت داؤد کے بعد حکمرانی حضرت سلیمان کے پاس گئی ہے. جس سے معلوم ہوا کے اگر بیٹا اس قابل ہے اور قرآن نے جو شرائط رکھی ہیں اس پر پورا اترتا ہے تو حکمرانی باپ سے بیٹے میں منتقل ہو سکتی ہے. یھاں پر یہ بھی یاد رکھنا ضروری ہے کے طالوت کی حکمرانی کے دور میں ایک نبی موجود تھے اور حکمرانی پھر بھی الله نے طالوت کو عطا کی نہ کے نبی کو. تو نبی ہونا بھی حکمرانی کے لئے کافی نہیں اور اگر حضرت سلیمان کے دور میں کوئی ان کا امتی حضرت سلیمان سے زیادہ حقدار ہوتا تو حکمرانی الله اس کو عطا کرتا جیسا کہ الله نے طالوت کو حکمرانی عطا کر کے دکھایا تھا. اس سے ثابت ہوتا ہے کے الله نے حضرت سلیمان کو حکمرانی ان کی نبوت کی وجہ سے نہیں بلکہ انکا حکمرانی کے قابل ہونے کی وجہ سے عطا کی.

ان آیتوں میں الله نے ہمیں کوئی بنی اسرائیل کی تاریخ نہیں بتانی تھے بلکہ ہماری لئے ہدایت اور رہنمائی اور اصول بتائے ہیں. ویسے تو ہم زبان سے کہتے ہیں کے قرآن کی ایک ایک آیت میں علم کا سمندر ہے پر اس علم کے سمندر میں سے کچھ حاصل کرنے کے لئے ہم تیار نہیں. میری الله سے دعا ہے کے الله مجھ سمیت ہمیں ان آیات کو سمجھنے اور ان میں چھپے بیش بہا ہدایت رہنمائی کے نگینوں سے استفادہ کرنے کی توفیق دے. امین

Source : – http://call2quran.blogspot.com/2015/12/blog-post_29.html