الیکشن

Posted on December 6, 2015



الیکشن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ملک ریاست

چند ایک ممالک کے سوا دنیا بھر میں مستحکم اورمضبوط جمہوری حکومتیں قائم ہیں جو الیکشن کے ذریعے عوامی ووٹ کی طاقت سے قائم ہوتی ہیں، یہ الیکشن صرف ہمارے ہاں نہیں بلکہ امریکہ، برطانیہ کنیڈا یورپ ترکی سمیت پوری دنیا میں ہوتے ہیں اور انہی کے نتائج پر دوبارہ حکومتیں قائم ہوتی ہیں ، لیکن ہماری طرح وہاں نہ تو الیکشن کے دن فائرنگ ہوتی ہے ، نہ قتل وقتال نہ ڈھنگا نہ فساد، نہ دھاندلی اور نہ دھاندلی کے الزامات ۔۔۔ اور نہ پورا پورا دن موٹربائیک کے سلنسرز کھول کر قانون کی دھجییان آرائی جاتی ہیں اور نہ یوں پولیسں بت بن کر خاموش کھڑی تماشا دیکھتی ہے کہ چلو آج کر لو جو کچھ کرنا ہے کیوںکہ الیکشن ہو رہے ہیں۔۔۔۔حتی کہ معمولات زندگی میں کسی قسم کی کوئی رکاوٹ نہیں آتی ۔۔۔۔ بلکہ الیکشن کے بعد دونوں امید وار ایک دوسرے کو جیت کی مبارک باد دیتے ہیں اور یوں اگلے الیکشن تک خاموشی سے اپنا کام کرتے ہیں۔۔۔۔۔
لیکن ہمارے ہاں الیکشن کے نام پر۔ ضلالت ، بے ہودگی ، بےشرمی عدم تعاون اور عدم برداشت کی انتہا ہو جاتی ہے ۔۔۔ الیکشن الیکشن نہیں بلکہ جنگ کی صورتحال اختیار کر جاتے ہیں۔۔۔ روڈ بند، بازار بند ، اڈے خالی ، کرایا ڈبل، سرعام اسلحہ کی نمائش ، گالی گلوچ ، لڑائی جھکڑا ، فساد کیا کچھ نہیں ہوتا ہے ۔۔۔

دنیا بھر میں کتے اور بلی کے مرنے پر کورٹ میں حاضری اور سزا مقرر ہے جبکہ ہمارا قانون اتنا کمزور اور انسانی موت اتنی سستی ہے کہ سرعام گولی مار دی جاتی ہے پر کوئی پوچھنے والا نہیں ہوتا۔۔۔ اب سینکڑوں معصوم اور بے گناہ افراد اس بلدیاتی الیکشن کی بیھنٹ چڑھ گئے ۔ ان کا کیا قصور تھا ۔۔۔ کوئی ہے جو بتا سکے کہ ان کے خون کا حساب کس سے مانگا جائے ؟ ان کی مائیں کس سے ان کے خون کا حساب مانگیں کہ انکے لخت جگر کو کس جرم کی پاداش میں ابدی نیند سلا دیا گیا ؟ کیا لڑائی جگھڑے میں سوائے موت کے کوئی اور آپشن نہیں جو ہم استعمال کر سکیں۔۔۔؟
آخر بتاوکہ ہم دنیا کے کون سے خطے میں جی رہے ہیں،جہاں انسانیت نام کی چیزنہیں، جہاں ایک غریب کا مقام ایک جانور جیسا ہے؟ کیا مہذب معاشرہ ایسا ہوتا ہے۔۔ جہاں بھائی بھائی کے خون کا پیاسا ہو صرف ایک ووٹ کے لیے؟ صرف الیکشن اور ووٹ کے دن سینکڑوں لوگ مار دیے جائیں؟ جہالت کی بھی انتہا ہوتی ہے کیا ہم وہ انتہا بھی کراس کر چکے ہیں۔۔ آخر کب تک یوں ہی یہ سلسلہ چلتا رہے گا، کب تک معصوم لوگ مفاد پرستوں کے ہاتھوں کھلونا بنتے رہیں گے ، کب تک یہ قتل و قتال اورفساد کا سلسلہ چلے گا ، کب تک ماوں کے خوب چکنا چور اور ان کی گودیں اجٰڑتی رہیں گی، ؟ آخر ہمیں کب عقل آئے گی؟