فرانس حملہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ملک ریاست

Posted on November 16, 2015



چونکہ مصروفیت کی بنا پر چند دن سے میڈیا بشمول فیس بک سے مکمل دور ہوں۔۔۔ اتنا دور کہ فرانس حملے کے بارے میں بھی ایک دوست سے معلوم ہوا۔۔۔۔
فیس بک آن کی تو دیکھا بہت سے لوگوں نے اپنی فیسبک ڈی پیز فرانس کے غم میں تبدیل کی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عام عوام پر اتنا بڑا حملہ بہت بڑا ظلم ہے ایسا نہیں ہونا چاہیے تھا۔۔۔۔۔۔ پر کیا کروں ایسے مظالم کی بنیاد انہی نے ڈالی ہے۔۔۔ جس پر ہمیں آج بڑا افسوس ہو رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ان حملوں کے بعد ایک بات سمھ میں آئی ہے کہ جو دوسروں کے گھروں میں آگ لگا کر تماشا دیکھتے ہیں ۔۔ایک دن ان کے اپنے گھربھی جلتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لمبی چوڑی بات نہیں کرتا صرف اتنا کہتا ہوں کہ ہمیں کوئی افسوس نہیں ہونا چاہیے ان حملوں پر۔۔۔۔ بلا ہم کیوں اپنی فیس بک ڈی پی چینچ کریں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا پشاور کے مٰعصوم بچوں کے خون کے بعد کسی یورپی یا بڈھے گورے نے اپنی ڈی پی چییچ کی تھی ؟۔۔۔۔ کیا ہمیں ہی بہت دکھ ہوتا ہے۔۔۔ کیا مسلمانوں کا شمار انسانوں میں نہیں ہوتا؟ کہ جہاں چاہو مار دو ۔۔ کیوں کہ یہ مسلمان ہیں۔۔۔۔۔۔؟
مختصر یہ کہ افغانستان، پاکستان، فلسطین، عراق ، شام ، برما چیچنیہ ،بوسنیہ ، لیبیا اور کشمیر میں کڑورں مسلمان ان ظالم دہشت گردوں نے مار دیَے۔۔۔۔ کیا یہ سارے دہشت گرد تھے؟ اس لیے اگر تھوڑے سے ان کے مر گئے تو کوئی بڑی بات نہیں۔۔۔۔
نوٹ۔۔۔۔۔۔
جہنوں نے جلد بازی میں اپنی ڈی پی تبدیل کی وہ فورا اسے حقائق کے مد نظر دوبارہ تبدیل کریں۔۔۔۔۔۔