انجوائے۔۔۔۔۔۔۔۔ ملک ریاست

Posted on November 16, 2015



انجوائے۔۔۔۔۔۔۔۔ ملک ریاست

گزشتہ ہفتے ہم میرپور اور منگلا ڈیم کی سیر کیلیئے گئے تو دوران
تفریح عین ڈیم کے کنارے روڈ کے درمیان ہم نے مغرب کی نماز باجماعت ادا کی۔۔۔۔ چاروں اطراف میں مکمل تنہائی ، ڈوبتے سورج کی شعاوں ،ہلکی خنکی، سرد ہوا،اور پانی کے شور میں نماز کا مزہ ہی آ گیا۔۔۔۔۔۔ دل چاہ رہا تھا کہ کچھ دیر اسی پرسکون ماحول میں بیٹھ کے اللہ کو یاد کیا جائے ۔۔۔اور اتنی خوبصورت شام پر اللہ کا شکر ادا کیا جائے۔۔۔لیکن وقت کی قلت کے سبب وہاں رکنا محال تھا۔۔۔۔
شام کا منظر، اجلا رستہ، ایک کہانی تو اور میں
ڈھلتا سورج، بڑھتا سایہ، کشتی رانی تو اور میں
اس کے علاہ میں آپ کو بتاوں کہ ہم نے اپنے سیرو تفریج کے دووں کے دوران ایسی ایسی جگہوں پر نماز پڑھی کہ وہاں کسی نے نماز کا سوچا بھی نہ ہوگا۔۔۔۔۔جن میں پہاڑوں کی چوٹیاں اور دریاوں کے کنارے شامل ہیں۔۔۔۔۔
ویسے بتاتا چلوں کہ روٹین میں ہم اتنے پکے مسلمان نہیں ہیں کہ ہر نماز باقاعدہ پرھتے ہوں لیکن جب کبھی سفر یا سیرو تفریح پے جاتے ہیں تو ہماری حتی االمکان کوشش ہوتی ہے کہ وہاں نماز ہم سے نہ چھوٹ پائے ۔۔۔۔۔۔
اپنی مثال دے کر خدا نخواستہ میرا اشارہ اپنا دیندار ہونا بتانا مقصود نہیں اور نہ اسے ریاکاری سمھجا جائے۔۔۔۔۔ بلکہ ایک اہم بات اور حقیقت سمھجانا مقصود ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا نظریہ ہے کہ زندگی ایک بار ملتی ہے اسے کھل کے جینا چاہیے نہ کہ گھٹ گھٹ کہ مرا جائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس لیے جتنا ہو سکے لائف کو انجوائے کرنا چاہیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔زندگی کے ایک ایک لمحے کو خوشگوار اور یادگار بنانا چاہیے۔۔۔ پر ہم لوگوں نے انجوائے کو اللہ کی ناراضگی سے جوڑ لیا ہے، ہم نے انجواَے کو ڈانس پارٹی، فحش مجرے، شراب نوشی سے غل غباڑے اور بلند آواز میں میوزک کو سمجھ لیا ہے حالنکہ یہ انجوائے نہیں اللہ کی ناراضگی کے اسباب ہیں۔۔۔ کہ ہم اپنی خوشی میں اللہ کو بھول جاتے ہیں۔۔جس وجہ سے ہم مختلف پریشانیوں اور مصبیتوں کی ذد میں رہتے ہیں۔۔۔۔۔۔
انجوائے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ آپ گھروں سے نکلیں، گھومیں پھریں ، اللہ کی زمین دیکھیں، مختلف علاقوں کے رسم ورواج دیکھیں، خوبصورت جگہوں پر جائیں، اور اللہ کی خوبصورتی کا اندازہ لگائیں کہ اللہ کتنا بڑا اور حسین ہے کہ جس نے اتنی حسین زمین بنائی۔۔۔۔۔