قربانی

Posted on September 23, 2015



قربانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ملک ریاست
یاد رہے کہ قربانی شعائراللہ میں سے ہے اور شعائراللہ کا کسی طرح سے مذاق ، حجت یا حیلے بہانے سراعا کفر ہے۔۔۔۔۔۔مختلف ٹی وی چینلز پر عقل سے خالی اور شعائراللہ سے ناواقت حضرات جن کی گھر میں بھی کوئی شنوائی نہیں ہوتی تو ٹی وی چینلز پر آکر براجمان ہو جاتے ہیں اور کم علم لوگوں میں وسوسے اور شکوک وشہبات پیدا کرتے ہیں۔۔۔
خدا رحم کرے ایسے تجزیہ نگاروں اور غریبوں کے ہمدردوں پے۔۔ جو کہتے ہیں کہ مہنگا جانور خریدنے سے بہتر ہے پیسے غریبوں کو دے دیے جائیں۔۔۔ ارے عقل کے اندھوں قربانی سال میں ایک بار آتی ہے باقی گیارہ ماہ دو نہ غریبوں کو کس نے منع کیا ہے۔۔۔ قربانی اپنی جگہ لازم ہے،حج اپنی جگہ عمرہ اپنی جگہ جبکہ غریبوں کو دینا اپنی جگہ بڑا اجرو ثواب کا کام ہے۔۔۔ ہمارے پیارے نبی علیہ السلام نے ایک وقت میں 70 اور100 تک قربانیاں کی ہیں۔۔ اس لیے صاحب استطاعت کو چاہیے کہ زیادہ سے زیادہ قربانیاں کرے۔۔۔۔
اس کے علاوہ آج ایک چنلز پر دیکھا کہ لڑکیاں قربانی کے جانوروں کے ساتھ ماڈلنگ کر رہی تھی۔۔۔ عید قربان پر بکروں پر اور قربانی کے جانوورں پر مزاحیہ ڈرامے بنتے ہیں جس میں طرح طرح کا مذاق اڑایا جاتا ہے۔۔۔ یہ سب حرام کام ہیں اس طرح کے ڈراموں کی اسلام میں کوئی گنجائش نہیں ہے۔۔۔ اوپر وضاحت کر چکا ہوں کہ شعائراللہ کا مذاق کفر ہے۔۔۔ اس طرح یہ سب حضرات کفر کا ارتکاب کر ہے ہیں۔۔۔
ایک اسلامی ملک میں ایسے پروگرام چلا کراسلامی شعار کر مذاق اڑایا جا رہا ہے۔۔۔ لیکن حکومتی ادارے غفلت کی چادر آوڑھے گہری نیند سوئے پڑے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ واللہ اعلم بالصواب