۔ اسلحہ۔۔۔۔۔۔ قسط 2۔

Posted on July 13, 2015



گزشتہ سے پیوستہ۔۔۔۔۔۔۔ اسلحہ۔۔۔۔۔۔ قسط 2۔۔۔۔ ملک ریاست

گزشتہ تحریر میں اسلحے سے متعلق حکومتی پالیسی کو رد کیا تھا ۔۔۔۔۔ اور کہا تھا کہ اگر ملک کو ہر طرح کی دہشت گردی سے نجات دلانی ہے تو ملک سے اسلحے عام آدمی کی پہنچ سے بہت دور کیا جائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اسلحے کی نمائش ناقابل ضمانت جرم ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اللہ کرے میرے ارض پاک کے چپے جپے پر دیر پا امن قائم ہو۔۔۔ لیکن مجھے لگتا نہیں ہے کہ ملک سے دہشت گردی کا خاتمہ ممکن ہے کیونکہ حکومت اس میں اتنی سنجیدہ نہیں لگتی۔۔۔
یہاں موقعے کی مناسبت سے ایک واقع شیئر کرتا چلوں کہ” آج سے چند ماہ قبل جب میں پشاور کی سیر پر تھا تو
حیات آباد میں موجود خوبصورت اور تاریخی پارک” باغ تاتارا” سے نکلے
تو دوست کہنے لگے کہ آو “کارخانو بازار” چلتے ہیں۔۔۔۔۔” کارخانو” حرف عام جسے لوگ” باڑہ” کہتے ہیں۔۔۔۔۔
ہم حیات آباد سے بذریعہ بس “کارخانو” پہنچ گئے۔۔۔۔ کارخانو پشاور اور خیبر ایجنسی کی سرحد پر واقع ہے۔۔۔۔ بہر حال کارخانو میں گھومتے رہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کچھ شاپنگ بھی کی ۔۔۔کیوں وہاں اشیاء عام مارکیٹ سے بہت سستی ملتی ہیں۔۔۔۔۔۔۔ وہاں ہر چیز کے الگ الک بڑے بڑے بازار ہیں۔۔۔۔۔۔۔ سب سےآخر میں اسلحے کا بازار ہے ۔۔۔۔۔ جہاں سے لوگ آزادانہ اسلحہ خرید رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اتنا اسلحہ دیکھ کر میں خوف اور اس طرح آزادانہ خیروفروخت پر حیرت میں مبتلا ہوا۔۔۔۔۔۔ وہاں ہر طرح کا اسلحہ ہر کسی کو آسانی سے مل سکتا ہے۔۔۔۔۔۔۔ پر وہاں سے مختلف شہروں میں پنچانے کا کام ہمارے ڈرائیورز حضرات چند ہزار میں کرتے ہیں۔۔۔۔
بہرحال اسلحہ مارکیٹ کے بالکل سامنے پشاور اورخیبر ایچنسی کی چیک پوسٹ پے۔۔۔۔۔ ہم وہاں سے ڈرتے ڈرتے خیبر ایجنسی میں داخل ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔ خیبر ایجنسی میں کئی کلومیٹر تک گئے ۔۔۔۔۔۔۔ وہاں کا رہن سہن اور خوشحالی دیکھ کر بھی بہت حیرانگی ہوئی۔۔۔۔۔۔۔ جہاں تک میں نے دیکھا ہر گھر باہر ایک عدد گاڑی کھڑی نظر آئی ۔۔۔۔۔۔ وہاں “vego” گاڑیاں جن پر ہمارے سیاستدان گارڈ بھٹا کر فخر کرتے ہیں ۔۔۔ وہاں کے لوگ اسے سامان کے لیے استعمال کرتے ہیں۔۔۔ اور “hunda XLi” سواریوں کے لیئے۔۔۔۔ ہم “طورخم باڑدر” پر جانا چاہتے تھے ۔۔۔ لیکن ایک آدمی کا کرایہ 500 تھا۔۔۔۔۔۔ اس وجہ سے نہیں جا سکے ۔۔۔۔
بہرحال خیبر ایجنسی میں ہم بہت دور تک گئے۔۔۔۔۔ پشتو سے اگاہی کی وجہ ہمیں کسی قسم کی کوئی مشکل پیش نہیں آئی۔۔۔ جب بالکل تھک گئے تو واپسی کی راہ لی۔۔۔۔۔
میں حیران ہوں کہ ہمیں آتے جاتے ہوئے چیک پوسٹ پر اور نہ ہی اس سے اگے کسی نے روکا۔۔ اور نہ ہی تلاشی لی۔۔۔۔۔۔
یاد رہے کہ یہ وہی خیبر ایجنسی ہے جہاں فوج ۲ سال سے اپریشن میں مصروف عمل ہے۔۔۔۔۔۔ لیکن ابھی تک دہشت گردوں کا خاتمہ ممکن نہیں ہو سکا۔۔۔۔
جب سیکورٹی کے یہ حالات ہوں گے ۔۔۔ اسلحہ اس طرح سرعام فروخت ہو گا تو کیسے کہوں کے دہشت گردی ختم ہو جائے گی۔۔۔۔۔۔ شکریہ