“جاگ رے سندھی جاگ”

Posted on October 8, 2014



“جاگ رے سندھی جاگ”

جاگ رے سندھی جاگ
نا جعلی بھٹو کے پیچھے بھاگ

یہ بھٹو نہیں زرداری ہیں
یہ بازیگر اور مداری ہیں

نا پی پی کے محافظ ہیں نہ بی بی کے وارث ہیں
یہ مرتضی کے مجرم ہیں بینظیر کے قاتل ہیں

یہ سب ہیے انہیں کی مایا لاگ
جاگ رے سندھی جاگ
نا جعلی بھٹو کے پیچھے بھاگ

یہ آتے ہیں لوٹتے ہیں چلے جاتے ہیں
یہ پھر آئے ہیں لوٹیں گے پھر چلے جائیں گے

تم یونہی انہیں ووٹ دیتے رھوگے
پھر یونہی منہ لٹکائے روتے رھوگے

کیوں پڑے ھو صدیوں سے مانداء ریت
تم سے تو زورآور ہیے سمندر کی جھاگ

جاگ رے سندھی جاگ
نا جعلی بھٹو کے پیچھے بھاگ

اب وقت ہیے باغی ہونے کا
اب وقت ہیے بدلہ لینے کا
اب وقت نہیں ہیے ڈرنے کا
اب وقت ہیے آگے بڑھنے کا
اب وقت ہیے وقت بدلنے کا

اب ہیے لگا اس قوم کو تبدیلی کا جاگ
جاگ رے سندھی جاگ
نا جعلی بھٹو کے پیچھے بھاگ

اب تو اٹھ جا سندھی بھائی اب نہ اٹھو گے تو کب اٹھو گے
جب لٹ جائے گا سارا وطن’ یہ پوچھتا ہیے کیا تب اٹھو گے

تب دھرتی ماں بھی روتی ھوگی
بہتے آنسو پونچھتی ھوگی
پوچھتی ھوں گی اسکی آنکھیں
اب نا جگو گے تو کب جگو گے

جاگ رے سندھی جاگ
نا جعلی بھٹو کے پیچھے بھاگ

مدثر چوہدری

“To my Sindhi brothers & sisters in the honour of ‘Larkana Jalsa’ on 21st November 2014”