Muslim Country Islamic Constitution

Posted on July 2, 2014



پاکستان جس کی بنیاد اسلام ہے. اور جس کا آئین اسلام کو سامنے رکھ کر بنایا گیا ہے . کیا حقیقت میں یہ اسلامی ملک ہے. یہ سوال بہت سے اسلام پسند ذہنوں میں ہے. جب کہ آج تک اس سوال کا جواب ڈھونڈا نہیں جا سکا . ہر کوئی یہ تو کہتا ہے کہ پاکستان ایک اسلامک ڈیموکریٹک ملک ہے . کیا حقیقت میں ایسا ہی ہے . مختلف اسلامی آرگنائزیشنز خواہ وہ سیاست میں ہوں یا سیاست سے باہر ہر کوئی یہ کہتا نظر اتا ہے کہ یہاں کوئی اسلامی قانون نہیں. جب کے لبرلز یہ کہتے دکھائی دیتے ہیں کہ ہم ایک اسلامی ڈیموکریٹک ملک ہیں . جب کے حقیقت میں یہاں اسلامی قوانین برائے نام اور صرف اور صرف کتابوں یا کانسٹیٹیوشن کی کتابوں میں ہی بند ہے . جہاں تک میرے مشاہدے کی بات ہے اگر ہم اسلامی ملک ہیں تو کیا ہم سب اسلام کے مطابق زندگی گزار رہے ہیں اگر ہاں تو سوال یہ پیدا ہوتا ہے . کہ کیا ہم الله کے احکامات کی پابندی کرتے ہیں . کیا ہم ہمسایوں کے حقوق کا خیال رکھتے ہیں . کیا ہم زکات ادا کرتے ہیں کیا مسجد کی طرف نماز ک لئے جاتے ہیں . کیا ہم روزے رکھتے ہیں . کیا ہم لوگوں کی امانتوں کا خیال رکھتے ہیں . اگر ہاں تو پھر آج ہم دہشت گرد کیوں کہلواتے ہیں . کرپٹ اور بے ایمان کیوں کہلواتے ہیں . اسلام تو وہ مذہب ہے جو ہر ایک کو برابری ، انصاف ، بھائی چارے کا درس دیتا ہے . اسی طرح اگر ہم ڈیموکریسی کی بات کریں تو وہ بی اسلام کے رولز کو فالو کرتے ہووے انہی سب چیزوں کو بیان کرتی ہے . اب دیکھنے کی بات یہ ہے کہ اگر واقعی ہم اسلامک ڈیموکریٹک کنٹری ہیں تو ہمیں انصاف کیوں نہیں ملتا . ہمیں ہمارا حق کیوں نہیں ملتا . مجرم کو سزا کیوں نہیں ملتی . ہر کوئی اس بات کے پیچھے لگا ہوا ہے . کہ فلاں فلاں اسلام کو اور ڈیموکریسی کو نقصان پہنچا رہا ہے . اوہ بھائی یہاں اسلام اور ڈیموکریسی ہے کہاں .اگر تو یہ کہنا کہ موسیقی روح کی غذا ہے یہ اسلام ہے تو ہمیں ایسا اسلام نہیں چاہیے . کیوں کے حدیث مبارک ہے کہ قرآن روح کی غذا ہے . لکن یہاں تو وہ سب جو اپنے آپ کو بہت پڑھا لکھا اور زہین کہتے یا سمجھتے ہیں . میڈیا پر بیٹھ کر کہ رہے ہوتے ہیں کہ موسیقی روح کی غذا ہے اور اچھا میوزک نہ سننے والا اچھا انسان نہیں ہو سکتا . جب کے قرآن یہ کہتا ہے کہ موسیقی سننے والوں کے کانوں میں سیسہ پگھلا کر ڈالا جائے گا . آج یہ ٹیلی ویژن پر بیٹھ کر علما کو برا بھلا کہتے ہیں اور ناچنے گانے والوں کو عزت و تکریم دیتے ہیں . جب کے قیا مت کی نشانیوں میں سے ایک نشانی یہ بی ہے کہ دیندار لوگوں کو رسوا کیا جائے گا اور ناچنے گانے والوں کی تکریم کی جائے گی . جھوٹ بولنے والا عزت دار اور سچ بولنے والا بدنام کر دیا جائے گا .تو کیا اسلامی کنٹری یا معاشرہ ایسا ہوتا ہے . اسلام کہتا ہے چوری کرنے والے کے ہاتھ کا ٹ دیے جائیں جب کے یہاں پیسے لے کر چوروں کو چھوڑ دیا جاتا ہے . ایک حدیث مبارکہ ہے کہ جھوٹ نیکیوں کو ایسے کھا جاتا ہے جیسے گھن لکڑی کو . لکن ہمارے ہاں تو ہر چیز کی بنیاد صرف اور صرف جھوٹ ہے. اور ہمارے حکمران میڈیا پر دن دہاڑے جھوٹ بول رہے ہوتے ہیں . یہ تو اسلام ہے جب کہ ڈیموکریسی بی جھوٹ بولنے والوں کو سخت سزا دینے کا کہتی ہے . لکن ہمارے ہاں جھوٹا طاقتور، اور سچا ہمیشہ کمزور ہوتا ہے . کیوں کے یہاں سچ بکتا ہے . انصاف دینے والا خود چور اور جھوٹا ہے. وہ انصاف کیسے دے گا . وہ کیسے کسی کو سزا دے گا اس کی مثالیں پاکستان سے بہتر شائد ہی کسی اور ملک میں یا کسی اور معاشرے میں ملتی ہوں مثال کے طور پر جس کے پاس جتنا پیسا ہے انصاف اور حق اتنا اس کے نزدیک ہے . ووہی سچا ووہی منصف ووہی حکمران ہے .ویسے تو پاکستان کی تاریخ ایسے کارناموں سے بھری پڑی ہے کہ جہاں ہر حکمران جھوٹ اور طاقت کے زور پر اپنا ہر حکم منواتا ہے اور پھر اس کو سہی بی ثابت کرتا ہے . کہنے کو تو ہم سب مسلمان ہیں لکن طاقت اور حکمرانی کے نشے میں یہ بھول جاتے ہیں کے یہ زندگی صرف چار دن کی ہے اور پھر اندھیری رات ہے . میں زیادہ لمبی تاریخ میں نہیں جاتا آپ کو ایک سال پیچھے لے جانا چاہوں گا . ١١ مئی ٢٠١٣ پاکستان میں جنرل انتخابات ہووے . پاکستان کی بہت سی جماتوں نے حصہ لیا جن میں سے چند ایک کسی نہ کسی دور میں حکومت میں رہی . اور کچھ ایسی بی تھیں جو پہلی مرتبہ حصہ لے رہی تھیں .اب ہیں تو سب مسلمان اور رہتے ہیں ایک اسلامک ڈیموکریٹک ملک میں . انتخابات ہووے کوئی جیتا کوئی ہارا . لکن بہت سی جماتوں بلکہ سب نے کہا دھاندلی ہوئی ہے .کچھ نے حکومت بنائی کچھ نے مخالفت کی . ہر کسی نے اپنے داؤ پیچ لگاے . ہر کسی نے پیسا استعمال کیا جھوٹ بولا فراڈ کیا لوگوں کو مارا اور اقتدار پر قابض ہو گیۓ . آخر کیوں حکومت کے لئے . طاقت کے لئے یہ ثابت کرنے کے لئے کے بس میں ہی ہوں باقی کچھ نہیں . لکن دوستو وہ انصاف، سچ ، برابری ، بھائی چا رہ کہاں گیا . وہ وعدے جن کو لوگوں کو سنا کر ووٹ لئے گے کہاں ہیں . اگر پاکستان واقعی ایک اسلامک ریبلک اور ڈیموکریٹک ملک ہے . تو کیا ان لوگوں کو اپنے آپ پیچھے نہیں ہو جانا چایہے . کیونکہ اسلام میں اور ڈیموکریسی میں جھوٹ ، فراڈ ، کی کوئی جگہ نہیں ہے . آپ منہاج القرآن کے سانحے کو ہی لے لیں . سب کچھ کرنے والے خود یہ کہیں کے ہمیں تو پتا ہی نہیں کون کر گیا جو لوگ وہاں قتل ہووے کیا ان کے قاتلوں کو سزا نہیں ملنی چاہے . اگر ہم اسلامی ملک ہیں اور خود کو ڈیموکریٹک کہتے ہیں تو کیا ان کے لواحقین کا حق نہیں کہ رپورٹ کروائیں . کیا حکومت کا حق نہیں کے ان کو انصاف دیا جائے . لکن خود ہی قاتل اور خود ہی منصف کیا یہ اسلامی معاشرہ ہے . کیا ہم ایک ڈیموکریٹک ملک ہیں . ہم سے تو وہ کافر ملک اچھے ہیں جن کے لوگ گھروں میں ہوں تو حکمران خود چل کر ان کے گھروں میں جاتے ہیں اور ان کو انصاف ان کی دہلیز پر فراہم کرتے ہیں . لوگوں کا حق کھا کر کہیں کہ لوگوں نے منتخب کر کے بھیجا ہے تو لعنت ہے ایسا مسلمان ہونے پر ایسا ڈیموکریٹک ملک ہونے پر . اگر تو یہ الله کے نبی کی تعلیمات کے مطابق ہے پھر تو ٹھیک ورنہ نہیں چاہیے ایسے ڈیموکریسی . نہیں چاہے ایسا قانون جو اسلام کے مخالف ہو ، نہیں چاہیے ایسی حکومت جو اسلام کو بدنام کرے . اب وہ وقت دور نہیں جس کا ذکر قرآن اور حدیث کرتی ہے . جس کا ذکر الله کا نبی اور امہات المومنین کرتی ہیں . کہ جب اس دنیا سے انصاف اٹھ جائے گا .قتل و غارت عا م ہو جائے گی . لوگوں کو ان کے حق سے محروم کر دیا جائے گا . اور لوگوں کی عزت اور مال محفوظ نہیں رہے گا . تو یہ سمجھ لو الله کا عذاب نزدیک ہے . اس کی پکڑ آنے والی ہے . پھر دیکیں گے کہ یہ طاقت یہ غرور یہ پیسا کہاں جاتا ہے . میں تمام سوسائٹی ، اپنے لوگوں اور حکمرانوں سے التجا کرتا ہوں کہ اب بی وقت ہے . لوگوں کا لوٹا ہوا مال انھیں واپس کر دو . ان کو انصاف دے دو . ان کے حق ان کو دے دو . کہیں یہ نہ ہو کہ تمہارے ساتھ انصاف ہو جائے. اور الله بہتر احتساب اور انصاف کرنے والا ہے . میری دعا ہے الله ہم سب کو اس ماہ رمضان کی برکت سے اچھا سچا مسلمان بنا دے . اور ہمیں سیدھا رستہ دیکھا دے . آمین