اللہ کی لاٹھی بے آواز ہوتی ہے۔

Posted on May 18, 2014



حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے دور خلاف میں، ایک چور پکڑا گیا اور حضرت عمر نے اس کا ہاتھ کاٹنے کا حکم دے دیا، اس چور نے اپنے اپ کو بچانے کے لیے یہ کہا کہ میں نے یہ چوری پہلی مرتبہ کی ہے، لیکن حضرت عمر نے اسکے اس دلیل کو ماننے سے انکار کردیا اور اس کہا کہ یہ تیرا پہلا جرم نہیں ہے اور تجھ کو اس کی سزا ضرور ملے گی۔ اآخر کار اس چور نے اقرار کیا کہ وہ پہلے بھی یہ حرکت کرتا رہا ہے، اور اس نے حضرت عمر سے پوچھا کہ اس کو اس کو کیسے پتہ چلا کہ وہ چوری کرتا رہا ہے، تو حضرت عمر نے اس کو کہا کے اللہ کسی پکڑ اس وقت تلک نہیں کرتا جب تلک وہ حد سے گذر نہ جائے۔ یہ میں نے اس واقعہ کا مفہوم بیان کیا ہے۔ اس کا حاصل مقصد یہ ہے کہ جب تلک کوئی اللہ کی مقرر کی ہوئی حدود کو پھلانگتا نہیں اس کی پکڑ نہیں ہوتی۔ جیو گروپ نے طاقت کے نشے میں اور کچھ ایسے عناصر جو خود کو اسہی طاقت کا سر چشمہ سمجھتے ہیں ان کے ایما پہ ہر کسی کو رگڑ کے رکھ دیا، کونسا ایسا لیڈر نہیں جو جیو کا نشانہ نہ بنا۔ ماسوا نواز شریف اور اس کا ساتھ دینے والے۔ مجھے یہ بھی اچھی طرح یاد ہے جب کامران خان عجب کرپشن غضب کہانی پاکستانی عوام کو سناتا تھا، لیکن اس کے آجکل ہونٹ کیوں سلے ہوئے ہیں؟ اس لیے کہ نواز شریف بھی ان عجب کرپشن کرنے والوں سے مل گیا ہے۔ حامد میر نے ۷ سال تلک پاکستان آرمی کو دنا کے کونے کونے میں بدنام کرنے کی کوشش کی، جنرل کیانی کو ھوش کیوں نہ آیا یہ تو میری سمجھ سے بالاتر ہے لیکں شریفوں کا لایا گیا شریف اتنا سادہ نہ نکلا اور اس نے آتے ہی پہلی فرصت میں جیو اینڈ کمپنی کو آڑے ہاتھوں لیا، لیکن پھر بھی جیو والوں نے سبق نہ سیکھا اور روز برروز ان کی ھٹ دھرمی بڑہتی گئی اور جب حامد میر پے حملہ ہوا تو جیو ساری حدود پار کرگیا اور پھر بے آواز لاٹھی ان پے چلنے لگی، لیکن افسوس کے جیو والے اسکو بھی نہ سمجھ سکے اور اپنی من مانی دھڑلے سے کرتے رہے۔ پھر انہوں نے ایسی حرکت کر ڈالی جس کی سنگینی کا ان کو تب پتہ چلا جب قدرتی لاٹھی ان پے بجلی بن کر گری۔ جیو والوں یو ٹیوب کی بندش کو کیا نظر میں نہیں رکھا تھا جو توہین رسالت کے جرم میں پاکستان میں سالوں سے بند پڑا ہے اور حکومت چاہتے ہوئے بھی اس کو کھول نہیں سکتی۔ اگر یو ٹیوب توہین رسالت میں بند ہوسکتا ہے تو جیو کیوں نہیں؟ اب انصار عباسی کہاں ہے جو اسلام کا ٹھیکیدار بنا پھرتا ہے؟ جو رسی دراز تھی اب وہ کھینچنی شروع ہو گئی ہے۔ اور جب اوپر سے رسی کھینچنا شروع ہو جائے تو نیچے والے کچھ بھی نہیں کرسکتے سوا اوپر والے کے جس کے قدرتی ھاتھ میں رسی ہے۔